Follow me

Self-Love
12th October 2015|Articles

Self-Love

Self-Love

Everyone claims to love the Lord more than they love anybody or anything else. But in reality, a human being loves himself more than he loves anybody else.

We help others and exhibit generosity for our own satisfaction and pleasure. Self-love is very discreet and you never happen to notice how much you love yourself.

In loving your own self, you exhibit love to others thinking this love will bounce back and that you will gain respect and love.

A common man will never think that he loves himself. But you love your children because they are your children and you love your wife because she is your wife. You do not feel the same love for another person’s children or wife.

Have you ever thought about how much you love yourself? Most people don’t think about it.

Everybody loves himself but you cannot love anybody else until you stop loving yourself.

Either you love yourself, or you love your wife, children, business or the Lord. You cannot love two different things at the same time, including yourself. If you say, ‘I love so-and-so,’ it means you love yourself and that person.

When you love others, you love them for your own sake. You actually love yourself and you express love to your children, wife, parents and fellowmen.

Now the question is: are you able to see whether or not you love the Lord more than you love yourself? Do you have a criterion upon which you can judge whose love weighs more in the scale of your heart?

In order to weaken self-love in you, you have to learn the art of forgiving.

If you have learned to forgive your enemy, it will benefit you greatly. By doing so, your ego will weaken thus lessening your self-love. However, if you retaliate and take revenge, you are causing great harm to yourself because it will strengthen your ego.

Ask yourself: is it easy for you to forgive others, especially those who have really damaged your good name, who are slandering and back-biting against you? It will always hurt; but relatively, it will become easy to say, ‘No, I am not going to retaliate. I will forgive.’

True forgiveness is not verbally saying, ‘I forgive you.’ Rather, it means there are no negative emotions or malice in your heart for that person. Your heart is clean.

But this ability to forgive comes with the abundance of Divine Energy in your heart and souls.

 

no comments
Share

Younus AlGohar

Representative of The Awaited One Lord Ra Riaz Gohar Shahi. Recognised as Ambassador of Peace and Man of Valour. Advocate of divine love and interfaith harmony.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

About the Author
Younus AlGohar is the representative of The Awaited One Lord Ra Riaz Gohar Shahi. Recognised as Ambassador of Peace and Man of Valour. Advocate of divine love and interfaith harmony. London, United Kingdom.
Google+
FACEBOOK

جشنِ ریاض 25 نومبر کو منایا جاتا ہے ۔ اور 25 نومبر ایسا مبارک دن ہے کہ اس دن ایک ایسا وجود مبارک آنکھوں کے سامنے ظاہر ہوا جس کو دنیا نے سمجھا ایک بچے کی پیدائش ہوئی ہے ۔حالانکہ وہ پیدائش نہیں تھی۔ آپ کی والدہ محترمہ جو سیدنا گوھر شاہی کی والدہ محترمہ کہلاتی ہیں ان سے جب اس بابت دریافت کیا گیا کہ سرکار سیدنا گوھر شاہی کے بابت کوئی خاص بات بتائیں جب آپ کی پیدائش ہوئی تو انہوں نے مسکراتے ہوئے فرمایا کہ مجھے ریاض نے قسم دی ہوئی ہے کہ اس راز سے میں پردہ نہیں اُٹھا سکتی ۔ تو پھر سرکار سیدنا گوھر شاہی سے اس بابت اجازت طلب کی کہ آپ اجازت دے دیں اس بارے میں کچھ دریافت کرنا چاہ رہے ہیں ۔ تو سرکار سیدنا گوھر شاہی نے فرمایا کہ ان کو تھوڑا بہت بتا دو ۔ اور پھر انہوں نے جو کچھ بتایا اس سے پتہ چلا کہ یہ بچہ دنیا کے اور نارمل بچوں کی طرح نہیں ہوا ۔صبح صادق کا وقت تھا کہ مجھے حضور ﷺ کا خواب میں دیدار ہوا اور انہوں نے مبارک بار دی اور پھر یہ بات بتا کر وہ رونے لگیں ۔ اور پھر روتے ہوئے بار بار یہی کہہ رہی تھیں کہ مجھے ریاض نے قسم دی ہوئی ہے اس لیے وہ الفاظ تو نہیں کہوں گی جو حضور نے مجھے کہے لیکن میں اتنا بتا دوں کہ اس کے بعد میں اُسی گہری نیند میں ہی تھی کہ بچے نے پاؤں باہر پسلی پرمارے ، تو اس پسلی پر مارنے کی وجہ سے میری آنکھ کھلی ۔ دیکھا تو یہ پہلو میں لیٹے ہوئے ہیں ۔
تو والدہ محترمہ نے بتایا جو انسانی پیدائش کے وقت معاملات ہوتے ہیں کوئی ایسی بات نہیں تھی ۔ پورا گھر ، پورا صحن خوشبوؤں سے معطر تھا اور بچہ پہلو میں موجود تھا۔اور دنیا والوں کے حساب سے وہی سمجھا گیا کہ بچہ پیدا ہو گیا ہے ۔لیکن والدہ محترمہ نے روتے ہوئے بتایا کہ یہ بچہ پیدا نہیں ہوا ، میرے ساتھ وہی روحانی واردات چل رہی ہے حضور ﷺ خواب میں آئے ہوئے ہیں اور وہ قسم دے رہے ہیں کہ اس کا کتنا خیال رکھنا ہے ، اسکا کتنا احترام رکھنا ہے ،یہ ایک بہت بڑا تحفہ تمہیں دے رہے ہیں۔اسطرح کی باتیں ہیں جو والدہ محترمہ نے کھولی نہیں کیونکہ ریاض نے قسم دی ہوئی ہے ۔وہ نہیں بتا سکتی کہ یہ کون ہے۔اس طرح سرکار کی آمد کا دن 25 نومبر قرار پایاہے۔
25 نومبر کو سرکار سیدنا گوھر شاہی کے جتنے بھی معتقدین ہیں اس دن کا ایک جشن مناتے ہیں جس کو ہم ’’جشنِ ریاض‘‘ کہتے ہیں ۔
...

View on Facebook

#QuoteoftheDay ‘One who loves cannot be a coward.’ - Younus AlGohar

#CitadelDía ‘Uno que ama no puede ser un cobarde.’ - Su Santidad Younus AlGohar
...

View on Facebook

#QuoteoftheDay
'Imam Mehdi (as) ke faiz se admiyat se insaniyat ka zahoor hota hai.' Izzat Ma'ab Sayedi Younus AlGohar

Add HH Younus AlGohar on Snapchat: @repimgs
...

View on Facebook